خواب اور کامیابی ایک ہی سکہ کے دو رخ ہیں

تحریر: عبدالرزاق چوہدری
خواب دیکھنے کی عادت ڈالیے ۔ خواب مستقبل کے عکاس ہیں ۔ آپ آئندہ سالوں میں کیاحیثیت، رتبہ اور مقام حاصل کرنے جا رہے ہیں آپ کے خواب ہی اس کا تعین کرتے ہیں ۔ ایک جامع تصور پر ہی حقیقت کی بنیاد استوار ہو سکتی ہے لیکن بد قسمتی کی بات ہے کہ ہمارے ارد گرد لوگوں کی بہت بڑی تعداد ایسی ہے جو بے خواب، بے سمت اور بے احساس زندگی بسرکر رہی ہے ۔ خواب ہی اک ایسا بنیادی عنصر ہے جو ساکت، جمود ، بیزار اور بے سکون زندگی میں ہلچل پیدا کرتا ہے ہ میں کچھ کرنے، کچھ بننے اور کچھ بڑاکرنے کی ترغیب دیتا ہے ۔ یاد رکھیے جس انسان نے بھی اپنی زندگی کی تختی پر عظمت کے کچھ حروف تحریر کیے ہیں اس کے پیچھے اس کے منفرد اور اچھوتے خیال ہی کا کمال ہے ۔ خواب انسانی زندگی میں محرک کا کردار ادا کرتے ہیں اور سچ تو یہ ہے کہ جتنا بڑا خواب اتنی بڑی کامیابی ۔ لہٰذا کسی بھی انسان کے لیے جو کامیابی و کامرانی کا تاج اپنے سر سجانا چاہتا ہے اسے سب سے پہلے اپنی ذات کے اندر خواب دیکھنے کی عادت ڈالنا ہو گی ۔ کامیابی کے حصول کے لیے قابل عمل منصوبہ بنائیں ۔ ٓآپ زندگی سے کیا چاہتے ہیں ۔ آپ کی ضروریات اور خواہشات کا پیمانہ کیا ہے. ہر چیزکو ایک منصوبہ کی شکل دیجیے جبکہ ساتھ ساتھ اپنے آپ کو بھی کامیابی کے راستہ پر چلنے کے لیے تیار کیجیے ۔ اپنے آپ کو بخوبی سمجھا دیجیے کہ کامیابی کی کنجی راتوں رات ہاتھ میں نہیں آ جاتی اس کے لیے مسلسل محنت اور جدوجہد کے عمل سے گزرنا پڑتا ہے تب کہیں جا کر کامیابی کا تاج سر پر سجتا ہے ۔ خود کو بار بار ےاد دلائیے کہ کامیابی کے سفر میں انسان بار بار گرتا ہے اور بار بار اٹھتا ہے ۔ پریشانیوں ، مزاحمتوں اور رکاوٹوں کے پہاڑوں سے ٹکرانا پڑتا ہے اور زخمی ہو کر بھی اپنی ہمت، حوصلہ اور عزم کو جوان رکھنا پڑتا ہے تب کہیں جا کر مطلوبہ منزل ہاتھ آتی ہے ۔ چنانچہ اپنے آپ کو ہمہ وقت مشکل ترین حالات کے لیے تیا ر رکھیے تا کہ ایسے موقع پر آپ کی استقامت اور استقلال میں کمی نہ آئے ۔


سچ بات ہے ہر کوئی منفی سوچ کے حامل افراد سے دور بھاگتاہے اور اپنی صحبت میں صرف ان لوگوں کو دیکھنا چاہتا ہے جو مثبت سوچ سے معمور ہوں ۔ ان کے ذہنی سکون کو تاراج نہ کریں بلکہ ذہنی سکون کا سبب ہوں ۔ زندہ دل ہوں ، ہشاش بشاش ہوں اور خوش مزاج ہوں ۔ لہٰذا آپ اپنے ذہن میں صرف مثبت سوچوں کو جگہ دیں کیونکہ صرف مثبت سوچ ہی کامیابی کی راہ میں مفید ثابت ہو سکتی ہے ۔ اگر آپ کی سوچ مثبت نہیں تو فوری طوراپنی سوچ کو مثبت کرنے کے اقدامات کریں ۔ کچھ عرصہ کی مشق سے آپ کی سوچ مثبت ہو سکتی ہے ۔ آپ بخوبی جانتے ہیں کہ ہر انسان خوبیوں اور خامیوں کا مجموعہ ہوتا ہے ۔ ہمیشہ دوسروں میں اچھائی تلاش کریں اور ان کی اچھائی کی تعریف کرنے میں کبھی بخل سے کام نہ لیں ۔ کھل کر تعریف کریں لیکن ایک بات ذہن میں رکھیں کہ آپ کی جانب سے ادا کیے گئے تعریفی کلمات مکمل طور پر خلوص کے پیراہن میں لپٹے ہونے چاہییں ۔ جھوٹی اور خلوص سے عاری تعریف دوسروں کو الو اور بے وقوف بنانے کے سوا کچھ نہیں لہٰذا ایسے طرز عمل سے ہمیشہ گریز کیجیے ۔ جب ہم کسی سے پہلی بار ملتے اور بات چیت کرتے ہیں تو دوسروں کے سامنے ہماری زندگی کورے کاغذ کی طرح ہوتی ہے ۔ مد مخاطب قطعی اس بات سے لاعلم ہوتا ہے کہ آپ کس قسم کے انسان ہیں ۔ آپ ایک مہذب انسان ہیں یا اجڈ اور گنوار ۔ چنانچہ ایسی صورت حال میں صرف آپ کی زبان سے نکلے الفاظ ہی آپ کی قدر و منزلت کا اندازہ کروانے میں مدد فراہم کرتے ہیں ۔ اگر آپ کے الفاظ تمیزدار، شائستہ اور عزت افزا ہوں گے تو آپ کے بارے میں یہ اندازہ کرنا بالکل مشکل نہیں ہو گا کہ آپ صاحب اخلاق ہیں اور بات چیت کے آداب سے شناسا ہیں ۔ دوسری صورت میں اگر آپ کی زبان شستہ اور خوشگوار اثرات سے عاری ہے تو دوسرے کو سمجھنے میں ذرا دقت نہیں ہو گی کہ آپ ایک غیر مہذب انسان ہیں جو گفتگو کے مروجہ اصولوں سے بالکل ناواقف ہے ۔

کون ہے جو اپنے آپ کو غیر اہم اور بے وقعت دیکھنا چاہتا ہے ۔ کون ہے جو اپنے آپ کو دوسروں سے کمتر دیکھنا چاہتا ہے ۔ کون ہے جو اپنے آپ کو ناکام دیکھنا چاہتا ہے ۔ میرے خیال میں ایسا کوئی نہیں ہے ۔ اس لیے ضروری ہے کہ دوسروں کی زندگی میں اہم بننے کے لیے ان کو بھی اہمیت دیں ۔ دوسروں سے عزت و احترام سے پیش آئیں اور انھیں احساس دلائیں کہ وہ آپ کے لیے بہت اہم ہیں ۔ آپ ان پر بھروسہ اور اعتماد کرتے ہیں اور ان کا آپ کی زندگی میں خاص مقام ہے ۔ یقین کریں دوسروں کو متاثر کرنے اور ان کے دل میں جگہ بنانے کا اس سے اکسیر نسخہ اور کوئی نہیں ۔ مفیداور پر اثر لوگوں سے تعلقات استوار کیے بنا بھی کامیابی کا حصول مشکل امر ہے ۔ ایک فہرست مرتب کریں ان لوگوں کی جو منزل کو آسان بنانے میں آپ کی مدد کر سکتے ہیں ۔ پھر ان لوگوں سے میل جول بڑھایئے، دوستی کیجیے اور حسب موقع ان کی دوستی کا فائدہ اٹھائیے ۔ آپ ایسا صرف اس صورت میں کر سکتے ہیں جب ان کی نظر میں آپ ایک پسندیدہ شخصیت ہوں اس لیے اپنی ذات میں ایسے جوہر پیدا کیجیے جو متاثر کن ہوں اور لوگ بخوشی آپ کی مدد کرنے پر آمادہ ہوں کیونکہ لوگ صرف ان لوگوں کی ہی مدد کرتے ہیں جن کو وہ دل سے چاہتے ہیں ۔ ناپسندیدہ شخص کی کوئی مدد نہیں کرتا ۔ لہٰذا اگر آپ اپنے مقصد کو احسن انداز میں پورا کرنا چاہتے ہیں تو اپنے آپ کو لوگوں کے سامنے ایک دلچسپ، قابل قبول اور خوشگوار شخصیت کے روپ میں پیش کریں تا کہ وہ آپ کی مدد کرنے سے گریزاں نہ ہوں ۔
کامیابی کی راہ میں اکثر ایسے مقام آتے ہیں جب ہمت ٹوٹنے لگتی ہے حوصلہ جواب دینے لگتا ہے ۔ سمجھ بوجھ روٹھ جاتی ہے اور تدبیر آنکھیں پھیر لیتی ہے ۔ یعنی کہ حالات کی سنگینی کچھ یوں زور اور طاقت سے حملہ آور ہوتی ہے کہ جسم شل ہو جاتا ہے ۔ اس صورت حال میں کیسے اپنے آپ کو منظم اور اعتدال میں رکھا جا سکتا ہے یہ بھی ایک ہنر ہے اور کامیابی کے حصول کے لیے یہ ہنر بھی آپ کی دسترس میں ہونا چاہیے ۔

صبح اٹھنے کی عادت اپنائیے ۔ عظیم لوگوں کی زندگی کا مطالعہ کرنے سے معلوم ہوتا ہے کہ ان کی غالب اکثریت صبح جلدی اٹھنے کی عادی تھی اسی لیے وہ زیادہ چاق و چوبند تھے ۔ دوسری جانب تحقیق سے بھی معلوم ہوتا ہے کہ صبح سویرے بیدار ہونے والے افراد ان لوگوں کی نسبت زیادہ ترو تازہ اور مستعد ہوتے ہیں جو دیر سے جاگنے کی عادت میں مبتلا ہوتے ہیں ۔ وہ لوگ ٹال مٹول جن کا مشغلہ ہوتا ہے ان کے خواب کبھی حقیقت کا رنگ نہیں دیکھتے ۔ ہمیشہ ان لوگوں کے خواب ہی حقیقت کا جامہ پہنتے ہیں جو ہر کام وقت پر کرنے کا فن جانتے ہیں ۔ جو وقت کی اہمیت اور قدروقیمت سے بخوبی آگاہ ہوتے ہیں ۔ سچ تو یہ ہے کہ وقت کاضیاع کرنے والے وقت کے ہاتھوں ہی برباد ہو جاتے ہیں ۔ اسی لیے کہا جاتا ہے کہ گیا وقت ہاتھ نہیں آتا ۔ کامیابی کے حصول کا راز جامع منصوبہ بندی ،غیر متزلزل عزم اور جہد مسلسل میں پنہاں ہے ۔ اس لیے وقت کے ساتھ ساتھ اپنے عزم کی تجدید کرتے رہیں اور اس کی طاقت ، توانائی اور حرارت میں ہرگز کمی نہ آنے دیں ۔ ایسی صورت میں دنیا کی کوئی طاقت آپ کو کامیابی حاصل کرنے سے نہیں روک سکتی ۔

عبدالرزاق جگ

اپنا تبصرہ بھیجیں